After a long time, I attempted to write a poem. Here it is – pretty raw and unpolished. Will translate it later for readers who may not understand the language. It is entitled —
(so what if I went astray..)

Tum apni dunya kay baasi

Hum apni chah kay aseer
Milay jo ik din
Anjani rah per
Dekhna yeh hai keh
Who rah jis peh safar
Dushwar hi nahin
Shayad namumkin ho
Kis moR peh ja niklay
Ya phir
Kaun pehlay rastah badal day
Yeh hua bhi to
Koi ‘Nai’ baat nah hogi
Sun rakha hai
Muhabbat baad mein hogi
Jo mil nah saken
In ki yaad mein hogi
Hum Musafir-e-Dil
Bhtakna Jantay hain
Dil gariftah, Dil Nawaz
Hawadis aashna
Yeh bhi jantay hain
Muhabbat na bhi mile to
Hijr kay phool
Sanbhalna jantay hain

تم اپنی دنیا کے باسی
ہم اپنی چاہ کے اسیر
ملے جو اک دن
انجانی راہ پر
دیکھنا یہ ہے کہ
وہ راہ جس پہ سفر
دشوار ہی نہيں
شاید نا ممکن ہو
کس موڑ پہ جا نکلے
یا پھر
کون پہلے رستہ بدل دے
یہ ہوا بھی تو
کوئی ‘نئی’ بات نہ ہو گی
سن رکھا ہے
محبت بعد ميں ہوگی
جو مل نہ سکیں
ان کی یاد ميں ہوگی
ہم مسافرِِ دل
بھٹکنا جانتے ہیں
دل گرفتہ، دل نواز
حوادث آشنا
یہ بھی جانتے ہيں
محبت نہ بھی ملے تو
ہجر کے پھول
سنبھالنا جانتے ہيں

(A poem in Urdu – written casually – comments & criticism is welcome)